دبئی ٹیسٹ کے تیسرے روز پاکستانی ٹیم عمدہ پرفارمنس کی بدولت ٹاپ پر آ گئی ہے یونس خان اور سرفراز احمد کی بہت عمدہ کھیلے یونس خان نے ون ڈے کرکٹ سے باہر ہونے کی وجہ سے کافی شور مچایا مگر میرے نزدیک یونس خان اب ٹیسٹ کرکٹ کے لئے ہی رہ گئے ہیں کیونکہ ون ڈے کرکٹ اور t20 کرکٹ بدل چکی ہے جس طرح گھاس کی ہاکی سے آسٹروٹرف پر آ گئی جس کے لئے فٹ نس اور بازوﺅں میں بہت طاقت کی ضرورت ہوتی ہے۔ سرفراز بہت بڑا بیٹسمین ثابت ہو گا اور اس نے سنچری بناکر میری بات کو سچ کر دکھایا ہے۔ پاکستان ٹیسٹ جیتنے کی پوزیشن میںآ گئی ہے اور آج چوتھے دن چائے کے وقفہ کے قریب آدھ گھنٹہ تک مزید کھیل کر ڈیکلریشن کرنا ہوگی اور مزید 200 رنز کے لگ بھگ سکور کرنا ہوگا پاکستان کے عمدہ سپنروں یاسر شاہ اور ذوالفقار بابر کی آسٹریلین کی میرٹ پر اعتماد سے نہیں کھیل سکی ہے یاسرشاہ لیگ سپنر نے بہت متاثر کیا ہے اور بالر کو آپ دیکھیں گے پاکستان کی اس ٹیسٹ کی جیت میں اہم کردار ادا کریگا مصباح نے ابھی تک عمدہ کپتانی کی ہے سعید اجمل کے بغیر پاکستانی بالروں نے بہت عمدہ پرفارمنس دی ہے اب تک کی صورت حال کے پیش نظر پاکستان بہت مضبوط پوزیشن میں ہے اور یہ ٹیسٹ جیتنے کے قریب ہے ۔ وقت جس طرح بالروں کیلئے سازگار ہے پاکستان لیڈ ملا کر 300 کے لگ بھگ سکور بنا لئے تو یہ ٹیسٹ جیت سکتا ہے