امریکی ماہرین نے ایسی سافٹ روبوٹک ڈیوائس تیار کی ہے جو مستقبل میں انسان کو ہارٹ فیل یعنی اچانک دل بند ہونے کے وقت اسے دھڑکانے میں مدد فراہم کرے گی۔ یہ ایسی سافٹ روبوٹک ڈیوائس ہے، جو انتہائی نفیس ہے، جس کا ڈیزائن بھی دل کے طرز پر بنایا گیا ہے۔ ابتدائی طور پر اس سافٹ روبوٹک ڈیوائس کو جانوروں پرآزمایا گیا، جس میں ماہرین کو کامیابی بھی ملی ہے۔ جانوروں پر کامیاب آزمائش کے بعد اب خیال کیا جا رہا ہے کہ یہ سافٹ روبوٹک ڈیوائس انسانوں میں بھی کامیاب ہو جائے گی۔ امریکا کی مختلف جامعات کے ماہرین نے مشترکہ طور پر اس سافٹ روبوٹک ڈیوائس کو تیار کیا۔ رپورٹ کے مطابق ماہرین نے ڈیوائس کو جانوروں کے مختلف اقسام کے ہارٹ فیلیئر پر آزمایا، اور تمام اقسام پر تجربات کامیاب ہوئے۔ ماہرین نے اس الیکٹرانک روبوٹک ڈیوائس کو نصف چاند کی طرح بنایا ہے، جس کے مرکز میں ایک پائپ دے کر اس میں باریک سوئیوں کی طرح تاریں نصب کی گئیں۔ یہ الیکٹرک روبوٹک ڈیوائس دل کو مکمل طور پر اپنے اندر نہیں جکڑ لیتی، بلکہ اس ڈیوائس کا ایک ہی حصہ دل کو ڈھانپتا ہے۔ ماہرین کے مطابق انسانی دل دو مختلف لوئر چیمبرز میں تقسیم ہوتا ہے، جنہیں وینٹریکلز کہا جاتا ہے، ان میں سے دل کے دائیں طرف موجود وینٹریکل پمپنگ کے بعد خون کو انسانی پھیپھڑوں تک پہنچانے کا کام کرتا ہے، جبکہ بائیں جانب موجود وینٹریکل پمپنگ کے بعد خون کو جسم کے دیگر حصوں تک پہنچاتا ہے۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ انسان کا دل اس وقت ہی بند ہوجاتا ہے، جب دل کے وینٹریکلز میں سے کوئی ایک خون پھینکنے کا کام روک دے۔ نئی سافٹ روبوٹک ڈیوائس ان ہی وینٹریکلز کو نظر میں رکھ کر بنائی گئی ہے، جو ہارٹ فیل ہونے کے وقت فوراًَ مددگار ثابت ہوگی۔