اسلام میں قطعی طوری بدگمانیوں، توہمات اورسعد و نحوست کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ ڈاکٹر عامر لیاقت حسین


Renowned religious scholar Dr. Aamir Liaquat Hussain has expressed his views in ARY news program Sar-e-Aam about our society is a victim of omens and grudges and people are suppositious, that there is no place at all in Islam for good or bad omens, presages and superstitions.
Islam make us refrain from such kind of superstitions and good or bad omen, in many hadiths there is a clear warning to refrain from such superstitions, omens and predictions. like good and bad presages, black cat’s crossing your way, haunted places, and to see someone disliked in morning so that your full day will be in mess these sort of superstitions are rubbish, there is no such place of these kinds of omens in Islam, Hazrat Muhummad (s.a.w.w) hadith depicts that there is no such sort of good and bad presages in Islam, superstitious things doesn’t exist in Islam.
In religion, physiology and arts there is no place for superstitions at all, what Allah’s Prophet have said is religion , Baba Yahiya khan is not a part of religion or a final verdict, the nights, days and months about which Allah has stated only they posses importance but it has nothing to do with good or bad omens. As u say we shouldn’t do some of the tasks at Maghreb’s time then who told you this? In Mina and Muzdalfa Maghreb timing has immense importance. Religion is really easy; we can take different meanings out of it but not good and bad omens.

Trimming nails at night might be related with mannerism and abdicates but it is not related to any good or bad precedes, mirth, festivity or any wedding ceremony has no relation with any month, if someone died and one want to get married at that day than it is not related to the religion at all, but if one postponed it due to that incident then it is a part of one’s being cultured and civilized, but it is not again concerned with religion.

Ghosts (Jinnaat) existence has been proved in Quran pack and its denial is not bearable or appropriate any way. Quran Pak and our religion gave us a rule of lifeso it should be well understood by all of us that only Almighty Allah has power to make things possible and to turn anything according to his will, without Allah’s consent nothing can happen and we are helpless to Allah Ta’ala. As far as ghosts (jinnaat) are concerned, they are both Muslims and non Muslims as well, they can be pious or evil as well there are many jinnats to them the teachings of Islam have reached, Hazrat Muhummad (s.a.w.w) had invited jinnat and preached them regarding Islam and it is mentioned in surah-e-jinn in Quran pak.from prevent oneself from evil powers one should offer prayers and keep oneself clean through the method of abolition.

In old times parents restrict their daughters to go on terrace with open hairs not because of any bad omen or ghosts but just because boys are more dangerous than ghosts, so it is quite clear that superstition has no existence in our religion Islam.



http://www.femo.tv/sar-e-aam-6th-july-2013-aamir-liaquat-hussain-.html
www.aamirliaquat.com, follow on twitter @aamirliaquat




SARE AAM - ARY NEWS - DR AAMIR LIAQUAT HUSAIN




اسلام میں قطعی طوری بدگمانیوں، توہمات اورسعد و نحوست کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ ان خیالات کا اظہار معروف مذہبی اسکالر ڈاکٹر عامر لیاقت حسین نے اے آر واے نیوز کے پروگرام سرعام میں توہمات کا شکار معاشرہ ۔۔۔ وہم کے مارے لوگ میں کرتے ہوئے کہا کہ ۔۔۔




اسلام میں قطعی طوری بدگمانیوں، توہمات اورسعد و نحوست کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ احادیث مبارکہ میں کئی جگہ ان توہمات سے بچنے کی تلقین کی گئی ہے، جیسے بدشگونیاں، فال نکالنا، کلی بلی کا رستہ کاٹنا، سفر کا مہینہ، صبح سویرے کس کا منہ دیکھ لیا، مکان پر آسیب کا سایہ ہے وغیرہ وغیرہ ان کا اسلام سے کوئی تعلق نہیں۔ اسی طرح اسلام میں سعد و نحس کی بھی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ کوئی چیز سعد یا نحس نہیں ہوتی۔ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی حدیث مبارکہ کا مفہوم ہے کہ نحوست نہیں ہوتی۔ دین میں ان توہمات کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔




مذہب، نفسیات اور ادب میں وہم، توہمات کی کوئی گنجائش نہیں۔ جو اللہ کے رسول نے فرمایا دیا وہ دین ہے، بابا یحیی خان دین نہیں ہیں ۔۔۔ اللہ تعالی نے جن ایام، راتوں اور مہینوں کا ذکر ہے ان کی اہمیت ہے مگر اس کا تعلق سعد یا نحس سے نہیں ہے۔ جیسے آپ نے فرمایا کہ مغرب کے وقت بہت سے کام نہیں کرنے چاہیئں، یہ کس نے بتایا آپ کو۔۔۔ مزدلفہ و وقوف عرفات میں مغرب کے وقت کی بہت اہمیت ہے۔ دین بالکل کھلا ہے، آسان ہے، اس میں آپ جتنے مطالب نکال لیں، مگر سعد و نحس نہیں۔


رات کو ناخن کاٹنے کا تعلق تہذیب و تمدن ثقافت سے تو ہو سکتا ہے کہ آپ تمیز سے دن میں ناخن کاٹیں ، مگر دین سے اس کا کیا تعلق ہے؟ کسی خوشی کی تقریب یا شادی کا بھی کسی مہینے سے کوئی تعلق نہیں۔ کوئی دن یا مہینہ منحوس نہیں ہوتا۔ آپ عین کسی کے انتقال کے دن شادی کرلیں تو بھی دین نہیں روکتا۔ ہاں ہم تہذیب، تمدن یا کسی کی خوشی یا غم کا لحاظ کرتے ہوئے اگر کسی شادی کی تقریب کو موخر کردیں تو اس کا تعلق اخلاقیات سے ہے، سعد و نحس سے نہیں۔


جنات کا وجود قرآن پاک سے ثابت ہے اس کا انکار کسی طور بھی مناسب نہیں ہے۔ قرآن پاک اور ہمارے دین نے ہمیں ایک ہی کلیہ دیا ہے وہ اچھی طرح سمجھ لیں کہ اگر اللہ نا چاہے تو کچھ بھی نہیں ہوسکتا، چاہے پوری دنیا چاہے اور خدا نا چاہے تو کچھ نہیں ہو سکتا۔ ہر چیز اللہ کی منشا کی محتاج ہے۔ ہاں جنات میں کافر اور مسلمان بھی ہیں، شریر اور شریف بھی ہیں۔ ان میں وہ جنات بھی ہیں جن تک دین پہنچا ہے۔ جیسے سورہ جن میں ارشاد ہے کہ نبی کریم نے مسجد جن میں جنات کے ایک گروہ کہ اسلام کی دعوت دی تھی۔ شریر اور بدی کی قوتوں سے محفوظ رہنے کے لیے ہمیشہ باوضو رہیں اور عبادات کرتے رہیں۔


بال کھول کر چھت پر جانے سے والدین اس لے منع کرتے تھے کہ محلہ کہ اوباش لڑکے، جو جنات سے کم نہیں ہیں، وہ پیچھے نہ پڑ جائیں، اس کا بھی دین سے کوئی تعلق نہیں۔ ہم پراسرار چیزوں کے ذریعے اپنی انفرادی برتری قائم کرنا چاہتے ہیں۔




http://www.femo.tv/sar-e-aam-6th-july-2013-aamir-liaquat-hussain-.html
www.aamirliaquat.com, follow on twitter @aamirliaquat