#JangColumn "Phir Kutty ... Magr is baar "SHAHEED"...!" #LoudSpeaker by @AamirLiaquat Husain
پھر کُتّے مگر اِس بار شہید!...لاؤڈ اسپیکر۔۔۔۔۔ڈاکٹرعامرلیاقت حسین
مجھے قطعی اندازہ نہیں تھا کہ کتے اِس حد تک مقبول، محبوب اور غیر محسوس طور پر ایسے کرشماتی مذہبی ہو جائیں گے کہ اُنہیں شہید کے رُتبے پر فائز کرتے ہوئے زبان لڑکھڑائے گی اور نہ ہی قدم ڈگمگائیں گے...کتنا خوب صورت، مکمل، منفرد، یگانہ، مُنَصَّہ اور مالکانہ حقوق کا ترجمان جملہ ہے کہاگر امریکی ڈرون سے کتا مرے گا تو میں اُسے بھی شہید کہوں گا...اِس میں اہم ترین لفظمیں ہے، وہ میں جس نے انسان کو ہمیشہ پستی اور گمراہی کی طرف دھکیلا اور اِسیمیں کو انسان میں سے نکالنے اور اُس کے تزکیہ نفس کے لئے اللہ تعالیٰ نے کم و بیش ایک لاکھ چوبیس ہزار پیغمبروں کو اِس دنیا میں بھیجا...پَر کیا کیجئے کہ میں نکل کر ہی نہیں دیتا...بھلا بتائیے کہ دین کی خود ساختہ ٹھیکے داری اور اُس پر کامل تسلط کی خاطرفقیہانِ حرم بے توفیق کیسے مَگرائی انداز اختیار کر لیتے ہیں...ہیں تو یہ سب کے سب بلا کے گُھنّےمگراول فول فرمانے کے بعدایسے مُنّے بن جاتے ہیں کہ جیسے کچھ ہوا ہی نہیں...ظاہر ہے کہ جب میں آجائے گی تو دین وہی ہوگا جو میں چاہوں گا ...اللہ اور اُس کے رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا قراردیا ہوا حلال اور حرام اپنی جگہ لیکن میں یہ سمجھتا ہوں کہ یہ بھی حرام ہے اور وہ بھی حلال ہےبس یہیں سے تباہی کا آغاز ہوتا ہے ...کوئی کہتا ہے کہ میری رائے کے مطابقاور کوئی رائے یا اپنے فہم کا بوجھ اُٹھانے کے بجائے براہِ راست ہی کہہ ڈالتا ہے کہ میں کہہ رہا ہوں یہی دین ہے بس!!
لیجئے جناب! چھٹی ہوئی سب کی، اب حضرت نے فرمادیا ہے تویقینا ایسا ہی ہوگا،اِن کا تو خانوادہ ہی اسلامی، علمی اور مدرسائی ہے، بھلا اِن سے بہتر دین کے بارے میں آگاہی کسی اور کے پاس ہو ہی کیسے سکتی ہے ؟جو یہ ارشاد کریں گے وہی حتمی ہے باقی سب کچھ رسمی اور بھسمی ہے ، یہ اِنہی کا اعجاز اور اعزاز ہے کہ اسلام سے متعلق اِن کا ہر ایک قول مستند، معتبر اور مُصَدَّقہ ہے،کسی کی کیا مجال بلکہ کیا اوقات جو حضرت کے کہے پر اپنی لام قاف کو ترجیح دے...حضرت نے جو فرما دیا، فرمادیا ...میں اور آپ دین کے بارے میں جانتے ہی کیاہیں؟ہم ٹھہرے نِرے جاہل، اَن پڑھ، وحشی، اُجَڈ، بے ادب، نادان، گستاخ، اناڑی، ناواقف اور نِرے انجان!!...ہم کیا جانیں کہ کُتّے کا کیا مقام ہے؟کم از کم مجھ جیسا ناخواندہ تو صرف اِتنا ہی جانتاہے کہ کُتّے کی تعریف اِس سے زیادہ کیا ہوسکتی ہے کہ وہ ایک کُتّا ہے...یہ تو بھلا ہو امریکی سفیر کے ساتھ گھنٹوں ملاقاتیں کرنے والے ایک عظیم رہبر کا جنہوں نے یہ بیان دے کر ہم بے خبروں کی آنکھیں کھول دیں کہ کُتّا بھی شہید ہوسکتا ہے...اِس میں کمال کُتّے کا نہیں بلکہ اُس پر کی جانے والی اُس عظیم تحقیق کا ہے جس کے یہ رسیلے ثمرات اُس وقت تک حاصل ہی نہیں ہوسکتے تھے جب تک کہ امریکی سفیر کے ساتھ خاطر خواہ وقت صرف نہ کیا جائے...کُتّے کے بارے میں وہی بہتر جان سکتا ہے جس نے کُتّے کو چاٹا اور اُس سے چَٹوایا ہو اور اِس معاملے میں امریکی سفیر پر ذرہ برابر بھی شک کسی بھی کُتّے کو ناراض کردینے کا سبب بن سکتا ہے ،لہٰذا ممکن ہے کہ تنہائی کیاُن ملاقاتوں میں امریکی سفیر نے رہبرِ ملک و قوم و مذہب کو کھل کر کُتّے کے اُن پوشیدہ اوصاف سے روشناس کرا دیا ہو جن سے پوری دنیا کے مسلمان ابھی تک بے خبر ہیں اور شاید اِسی وجہ سے رہبر نے ڈرون پر اپنے غصے کا اظہار فرماتے ہوئے امریکہ کو یہ پیغام دیا ہو کہ ڈرون میں مرنے والے انسانوں کو تو سب ہی شہید کہتے ہیں لیکن میں تو اُس کُتّے کو بھی شہید کہوں گا جسے تمہارا ڈرون قتل کرے گا ...خواہ مخواہ لوگوں نے بات کا بتنگڑ بناڈالا ہے ،یہ تو امریکہ کو احساس دلانے کی کوشش ہے کہ اب تک کُتّوں کے بارے میں جس راز سے تم آگاہ تھے وہ اب میں بھی جان چکا ہوں اور اگر تم نے ڈرون حملے بند نہ کیے تو میں بتادوں گا کہ اِس بھری دنیا میں کُتّوں کی حقیقت صرف تم ہی نہیں بلکہ میں بھی جانتا ہوں، تم کافر، تمہارا ڈرون کافر، ڈرون چلانے والا کافر اور ہمارا ہر ایک ذرہ مسلمان،پَتّہ پَتّہ مسلمان، ڈالی، غنچے، کوچے، گلیاں، شہر سب مسلمان! جہاں تمہارا ڈرون گرے گا وہ سب شہید۔
حضرت کے فتوے کے بعد کسی کی کیا مجال جو اُف بھی کرے،امریکہ بزدل کی تو چھوڑیے یہاں توپاکستانی بہادر بھی دَم سادھے بیٹھے ہیں...کسی میں ہمت نہیں جوکُتّے کو شہید قرار دینے پر اُن کی آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر اُنہیں الفاظ واپس لینے پر آمادہ کر سکے...ہاں اگر یہی بات میری زبان کو گندہ کرجاتی یا کوئی اورعام پاکستانی،سیاست دان، کھلاڑی، فنکار یاسورۃ اخلاص سے ناآشنا عبدالرحمٰن ملک و اعتزاز احسن ٹائپ پھنّے خان بولتے بولتے پھسل جاتے تو ملک میں وہ طوفان اُٹھتا کہ الامان و الحفیظ!...گستاخِ دین اور شعائر اسلام کی تضحیک و توہین کرنے والا ناہنجار! جیسے ریڈی میڈ القابات اب تلک لوکل،شوشل اور ووکل میڈیا کو فتح کر چکے ہوتے،چہار جانب سے گالیوں اور کوسنوں کے بھپکے دماغ پھاڑ رہے ہوتے، جمعے کے خطبات کا موضوع ہی وہ جاہل ہوتا جس نے کُتّے کو شہید جیسا عظیم خطاب دے کر عالم اسلام کا سرجھکادیا...لیکن یہاں کہنے والامولانا ہے اور دنیا کا کوئی بھی مولانا غلط ہو ہی نہیں سکتا...اُس سے توبہ کی درخواست کرنا بھی بدترین گناہ ہے ،یہ سب ہی کے حق میں بہتر ہے کہ فوراً کوئی تاویل پیش کی جائے اور مولانا کو توبہ کی (معاذ اللہ) ہزیمت سے بچایا جائے،جس طرح کمان سے نکلے تیر اور پیٹ سے باہر لٹکی توند کاواپس جانا ناممکن ہے بالکل اِسی طرح یہ بھی قربِ قیامت ہوگی کہ اگرمولاناکسی بھی قسم کے دباؤ میں آکر یہ کہہ بیٹھیں کہ میں نے کُتّے کو شہید کہہ کر نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کے اُن اقوالِ صادق کی توہین کی ہے جس میں آپ نے واضح طور پر ارشاد فرمایا ہے کہ کتا نجس ہے اور یہ بھی کہ جس گھر میں کتے ہوں وہاں رحمت کے فرشتے داخل نہیں ہوتے...لہٰذا میں اپنے الفاظ واپس لیتا ہوں اور قوم سے معافی مانگتا ہوں۔
یہ اور بات ہے کہ اِس طرح اُن کا قد بہت بڑھ جاتا اور مجھ جیسا کم علم بھی اُن کے مضبوط قدردانوں میں شامل ہوجاتا، مگر یہ ضروری تو نہیں کہ اِس جہاں میں ہر تصور کو حقیقی منظر ملے...چنانچہ میرے خیال میں بلاکسی توقف اُن کو یہ تاویل پیش کر دینا چاہئے کہ یہ قوم اور میڈیا جاہل مطلق ہیں،یہ سمجھے ہی نہیں کہ میں کیا کہنا چاہتا تھا،حقیقتاً میرا اشارہ اصحابِ کہف کے کتے کی طرف تھا اور یہ سب جانتے ہیں کہ اصحابِ کہف اور اُن کا کُتّا بلا شک و شبہ اللہ سبحانہوتعالیٰ کے حکم سے کسی غار میں سورہے ہیں...اور اگرہم شمالی و جنوبی وزیرستان کا جغرافیائی طور پر جائزہ لیں تو ہم پر یہ بات عیاں ہوجائے گی کہ اِن علاقوں میں پراسرار،مشکل، پوشیدہ اور بھیدی غاروں کا ایک طویل سلسلہ ہے جسے کسی طور نظر انداز نہیں کیا جاسکتاجبکہ امریکہ جس تواتر کے ساتھ ڈرون حملے کررہا ہے اُس سے مجھے یہ ڈر لاحق ہوگیا ہے کہ اگر کسی غار میں اصحابِ کہف اور اُن کا کُتّا آرام کررہے ہیں تو کہیں وہ ڈرون گرنے سے شہید نہ ہوجائیں یعنی واضح ہوا کہ میں نے اصحابِ کہف کی شہادت کا تذکرہ کیا تھا اور چونکہ کُتّا اُن کے ساتھ ہی ہے لہٰذا وہ بھی شہید ہی شمار کیا جائے گا...بس ! اِتنی سی بات تھی اور دوستوں نے بے وجہ پہاڑ بنادیا...یہ تاویل ٹھیک ہے نا مولانا! مجھے یقین ہے کہ اِس حیلے سے آپ کا چہرہ صاف رہے گا اور کسی کو آپ پر انگلی اُٹھانے کا موقع تک نہیں ملے گا...البتہ شیخ سعدیؒ کا نظریہ ہماری سوچ سے قطعاً مختلف ہے وہ فرماتے ہیں کہ انسان چہرہ تو صاف رکھتا ہے جس پر لوگوں کی نظر ہوتی ہے مگر دل کو صاف نہیں رکھتا جس پر اللہ کی نظر ہوتی ہے !!
http://beta.jang.com.pk/NewsDetail.aspx?ID=144548





ہر دلعزیز میزبان اور مذہبی ریسرچ اسکالر ڈاکٹر عامر لیاقت حسین کے اچھے اچھے پیغامات مفت میں اپنے موبائل پر حاصل کرنے کے لیے ابھی ایس ایم ایس کیجئے
F @AamirLiaquat and SEND to 40404
Official website of Dr Aamir Liaquat Husain: www.aamirliaquat.com